نور مقدم قتل کیس؛آپ نے اپنے دفاع میں یہ بات بھی نہیں کی کہ ملزم منشیات کا عادی تھاچیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ

نور مقدم قتل کیس؛آپ نے اپنے دفاع میں یہ بات بھی نہیں کی کہ ملزم منشیات کا عادی … اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)نورمقدم قتل کیس میں سزاﺅں کیخلاف ملزموں کی اپیلوں پر چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہاکہ آپ نے اپنے دفاع میں یہ بات بھی نہیں کی کہ وہ منشیات کا عادی تھا، ہو سکتا ہے پراسیکیوشن کے کیس میں قانونی سقم ہوں ،بہت سی رعایتوں کے بعد سزا کی مدت کم رہ جاتی ہے۔ نجی ٹی وی چینل دنیا نیوز کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں نورمقدم قتل کیس میں سزاﺅں کیخلاف ملزموں کی اپیلوںپر سماعت ہوئی، وکیل ملزم نے کہاکہ ظاہر جعفر کا قتل کرنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا،چیف جسٹس عامر فاروق نے کہاکہ دونوں اکٹھے تھے، ایک کا قتل ہوااور کوئی باہر سے نہیں آیا،باہر ملازم موجود تھے، تھراپی ورکس والے بھی آئے مگر آپ نے کوئی دفاع نہیں لیا، واقعہ کو آپ خودکشی کا رنگ بھی نہیں دے سکتے ۔ چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہاکہ آپ نے اپنے دفاع میں یہ بات بھی نہیں کی کہ وہ منشیات کا عادی تھا، ہو سکتا ہے پراسیکیوشن کے کیس میں قانونی سقم ہوں ،بہت سی رعایتوں کے بعد سزا کی مدت کم رہ جاتی ہے، عدالت نے کیس کی سماعت کل تک ملتوی کردی ۔ مزید : قومی -علاقائی -اسلام آباد –
Source : https://dailypakistan.com.pk/07-Dec-2022/1517669

اپنا تبصرہ بھیجیں