یو ایم ٹی میں لسانیات اور ادب پر کانفرنس کا انعقاد

یو ایم ٹی میں لسانیات اور ادب پر کانفرنس کا انعقاد لاہور (پ ر) یونیورسٹء آف مینجمنٹ اینڈ ٹیکنالوجی (یو ایم ٹی) کے  شعبہ انسٹیوٹ آف لبرل آرٹس  کے زیر اہتمام  لسانیات اور ادب پر پہلی دو روزہ بین الاقوامی کانفرنس منعقد کی گئی جس میں ریکٹر یو ایم ٹی ڈاکٹر آصف رضا اور ڈائریکٹر جنرل یو ایم ٹی پروفیسر عابد شیروانی نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔کانفرنس میں ڈین انسٹیوٹ آف لبرل آرٹس ڈاکٹر نادیہ اور چیئر پرسن ڈاکٹر ارشد علی خان سمیت پاکستان بھر سے آئے سکالرز، ریسرچرز اور ماہرین، فیکلٹی اور طلبات کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔کانفرنس میں برطانیہ، نیدرلیڈ، سپین، کینیڈا اور امریکہ سے سکالرز و ریسرچرز نے زوم کے ذریعے خطاب کیا اور تحقیقی مکالے پیش کیے.تقریب سے خطاب کرتے ڈین شعبہ انسٹیوٹ آف لبرل آرٹس ڈاکٹر نادیہ نے مقررین،سکالرز اور شرکاء کا شمولیت پر شکریہ ادا کیا اور کہا کہ کانفرنس کا مقصد طلباء کو اختراعی خیالات کی تعلیم دینا اور انہیں یہ سکھانا ہے  کہ جدید طریقے سے تحقیق کیسے کی جائے۔ریکٹر یو ایم ٹی ڈاکٹر آصف رضا نے مقررین کا شمولیت پر شکریہ ادا کیا اور انسٹیٹیوٹ آف لبر آرٹس کے ڈین،ڈائریکٹر کو کامیاب کانفرنس کے موقع پر مبارکباد پیش کی اور کہا کہ دیگر کانفرنسز کی طرح آج کی تقریب بھی بہت اہم ہے۔ انکا کہنا تھا کہ یو ایم ٹی کا ایسی تقریبات کروانے کا مقصد یہ ہوتا ہے کہ طلباء  اور اساتذہ کو بہتر مستقبل کے لیے سہولیات فراہم کی جا سکیں تاکہ وہ جدت کی نئی راہیں استوار کر سکیں۔ ڈاکٹر آصف نے کہا کہ اس طرح کی کانفرنس جہاں پوری دنیا سے ماہرین شرکت کرتے ہیں اور اپنے تجربات بیان کرتے ہیں تو طلبا کو بہت کچھ سیکھنے کو ملتا ہے اور انکے علم میں اضافہ ہوتا ہے۔رکٹر یو ایم ٹی کا مزید کہنا تھا کہ انگریزی زبان کامیابی کی زبان  ہے یہ رابطے کی زبان ہے لہذا دور حاضر میں انگریزی زبان کی اہمیت کو فراموش نہیں کیا جا سکتا۔ انکا کہنا تھا کہ تنقیدی سوچ کے بغیر آپ کامیاب نہیں ہو سکتے اس لیے ضروری ہے کے ہم اس پر کام کریں۔کانفرنس میں لسانیات اور ادب کو موضوع پر قومی و بین الاقوامی ریسرچرز نے 100 سے زائد تحقیقی مقالے پیش کیے۔ اور خطاب کرتے ہوئے  بتایا کہ کس طرح لسانیات اور ادب کی اہمیت کو اجاگر کر کے جدت لائی جا سکتی ہے۔ تمام مقررین کا کہنا تھا کانفرنس کا مقصد لسانیات اور ادب کے حوالے سے درپیش چیلنجز کا حل کیسے جدید تحقیق کے  ذریعے نکالا جا سکتا ہے۔ ماہرین و ریسرچرز نے اس بات پر اتفاق کیا کہ انگریزی زبان کی اہمیت کو فراموش نہیں کیا جا سکتا لہذا ہمیں انگریزی زبان کو سیکھتے ہوئے بین الاقوامی کمیونیکیشن میں حصہ لے کر آگے بھڑنا ہوگا۔چیئر پرسن انسٹیوٹ آف لبرل آرٹس ڈاکٹر ارشد علی خان نے ریکٹر یو ایم ٹی ڈاکٹر آصف رضا سمیت دیگر مقرین کو سوینئرز بھی پیش کئے۔ مزید : کامرس –
Source : https://dailypakistan.com.pk/01-Dec-2022/1515143

اپنا تبصرہ بھیجیں