مسلمان لڑکی نے مذہب بدل کر ہندو لڑکے سے شادی کرلی

 

بھارتی ریاست اتر پردیش کے ضلع اعظم گڑھ میں ایک مسلمان لڑکی نے مذہب تبدیل کرکے ہندو لڑکے سے شادی کرلی۔

دویا بھارت کے مطابق مومن نامی مسلمان لڑکی اور سورج نامی ہندو لڑکے کا دو برس قبل معاشقہ شروع ہوا تھا، دونوں چھپ چھپ کر ملاقاتیں کرتے رہے اور پھر شادی کا فیصلہ کیا۔ لڑکی کے گھر والوں نے شروع میں شادی کی مخالفت کی لیکن جب لڑکے کے گھر  والوں نے رضامندی ظاہر کی تو لڑکی والے بھی مان گئے۔

مومن اور سورج کی شادی ہندو مذہب کے مطابق اترولیا پولیس سٹیشن کی حدود میں واقع  سمو مندر میں شادی کی۔ شادی سے قبل لڑکی نے اسلام چھوڑ کر ہندو مذہب اختیار کیا۔ سورج کی والدہ ریتا کا کہنا ہے کہ وہ اس شادی پر بہت خوش ہے  کہ ان کی بہو گھر آچکی ہے۔

ہندو تنظیم وشوا ہندو پریشد نے اس شادی پر خوشی کا اظہار کیا ہے۔تنظیم کے رہنما گورو سنگھ نے کہا ہے کہ مسلم سوسائٹی کی ایک بیٹی نے ہندو لڑکے سے شادی کی ہے جس کا ہم خیر مقدم کرتے ہیں، ہم ان تمام بہنوں کو خوش آمدید کہتے ہیں جو سناتن دھرما (ہندو مذہب) کو قبول کرتی ہیں۔

دوسری جانب شادی کی اطلاع ملتے ہی اترولیا تھانے کے انسپکٹر ردرا بھن پانڈے لڑکے کے گھر پہنچ گئے اور معاملے کی تفتیش کی ۔ انہوں نے بعد ازاں دائنک بھاسکر سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ  اس شادی کی وجہ سے علاقے میں امن و امان  کی صورتحال پیدا نہیں ہوئی۔


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے